45

بم دھماکہ ، 27 پولیس اہلکاروں سمیت 29 افراد جاں بحق

استنبول(بی این پی ) ترکی ایک بار پھر دہشت گردوں کے نشانے پر، استنبول میں چند سیکنڈ کے وقفے سے دو بم دھماکے، 27 پولیس اہلکاروں سمیت 29 افراد جاں بحق اور 166 زخمی ہوگئے۔برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق ارینا فٹبال سٹیڈیم میں ترکی کی دو بڑی ٹیموں کے درمیان میچ ختم ہونے کے دو گھنٹے بعد کار بم دھماکا ہوگیا اس سے چند سکینڈ بعد دوسرا دھماکا پارک کے قریب ہوا جس سے متعدد افراد جاں بحق اور سینکڑوں زخمی ہوگئے ہیں۔ترک وزیر داخلہ سلمان صولو نے پارلیمنٹ میں بتایا کہ پہلا بم ایک کار میں نصب کیا گیا تھا جبکہ پارک کے قریب ہونے والا حملہ خود کش تھا۔ حملہ آوروں کا نشانہ پولیس تھی۔ انہوں نے بتایا کہ 10 مشتبہ افراد کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔ترک صدر طیب اردگان نے دھماکوں کو دہشتگرد حملہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ فٹبال سٹیڈیم کے قریب حملہ کرنا شہریوں کو نشانہ بنانا تھا یہ پولیس پربھی حملہ تھا۔ ترک صدر نے کہا کہ ہم اللہ کی مدد سے انسانیت کے دشمنوں کوشکست دیں گے۔اب تک حملوں کی کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی تاہم پولیس کو نشانہ بنائے جانے کی وجہ سے خیال کیا جا رہا ہے کہ ان حملوں کے ذمہ دار کرد باغی ہیں۔ترکی میں گزشتہ کچھ عرصے میں شدت پسندوں کی جانب سے حملوں میں تیزی دیکھی گئی ہے۔ ماضی میں ہونے والے حملوں کی ذمہ داری داعش اور کرد باغی قبول کرتے رہے ہیں۔

کیٹاگری میں : بین الاقوامی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں